Connect with us

Urdu Shayari

Ansoo Poetry in Urdu

رونے کے لئے ضروری نہیں آنکھوں کا نم ہونا
اکثر دل رویا کرتا ہے شام ہونے کے بعد

Rone k liye zorori nai ankhon ka nam hoona

Aksar dil roya karta hai sham hone ke baad

●○●○●○●○●○●○●○●

وہ آنسو بڑے مقدس ہیں جو دوسروں کے دکھ میں نکلیں

Wo aanso bare muqadas hain Jo dosroon k dukh main niklin

●○●○●○●○●○●○●○●

وہ آنسو بہت اذیت ناک ہوتے ہیں
جو چپکے سے بہہ کر تکیے میں جذب ہو جاتے ہیں

Wo anso bht aziyat naak hote hain

Jo chupke se beh kar takiye main  jazab hoo jaate

●○●○●○●○●○●○●○●

بے درد زمانے کا بہانا سا بنا کر
ہم ٹوٹ کے روتے ہیں تیری یاد میں اکثر

Be dard zamne ka bahana s bana kar

Hm toot kar rotay hain teri yaad main aksar

●○●○●○●○●○●○●○●

اب یہ حسرت ہے کہ سینے سے لگا کر تجھ کو
اس قدر رووں کہ آنکھوں میں لہو آ جائے

ab ye hasrat hai k seene se laga kar tujh ko

is qadar rou k ankhoon main laho aajaye

●○●○●○●○●○●○●○●

جو حیران ہیں میرے صبر پر ان سے کہدو
زمیں پر نہیں گرتے جو آنسو دل چیر جاتے ہیں

Jo hairan hain mre sabr par inko keh do

Zameen par nai girte jo anso dil cheer jate hain 

●○●○●○●○●○●○●○●

تمہیں حسرت تھی نہ دھوپ میں بارش دیکھنے کی میری جان
آ دیکھ یہ دیوانہ تیری یاد میں دن رات روتا ہے

Tumain hasrat thi n dhoop main barish daikhns ki mri jaan

Aa daikh ye dewana teri yaad main din raat rota hau

●○●○●○●○●○●○●○●

مت آنسوں بہاو ان بے قدروں کے لیے
جو قدر کرتے ہیں وہ رونے نہیں دیتے

Mat ansoo baha in be qadroon k liye

jo qaddar karte hain wo rone nai dete

●○●○●○●○●○●○●○●

اک روز کا صدمہ ہو تو رو لیں اے دل
ہم کو ہر روز کے صدمات نے رونے نہ دیا

Ik roz ka sadma ho to ro lain ae dil

Hm ko har roz sadmaat ne rone na dia 

●○●○●○●○●○●○●○●

اس طرح بھی یاد نہ آ مجھ کو
اتنے بھی آنسو نہیں ہیں میرے پاس

Is tarha bhi yad na aa muj ko

Itne bhi ansoo nahi mre ass pass

●○●○●○●○●○●○●○●

تم نے مڑ کر دیکھا ہی نہیں
کتنے آنسوں لئے بیٹھے تھے تیری راہ میں ہم

Tumne mur ke daikha hi nahi 

Kitne ansoo liye baitha the teri raah maim

●○●○●○●○●○●○●○●

بدلا ہوا آج مرے آنسوؤں کا رنگ
کیا دل کے زخم کا کوئی ٹانکا ادھڑ گیا

Badla hua aj Mere anso. Ka rang

Kya dil ke zakhm ka koi taanka udhar gya hai

●○●○●○●○●○●○●○●

کون پریشان ہوتا ہے تیرے غم سے

وہ اپنی ہی کسی بات پہ رویا ہو گا

Kon pareshan hota hai tere.gam ss

Wo apni hi kisi bat pe roya hoga

●○●○●○●○●○●○●○●

کاش آنسو جمع کیے ہوتے
آج اپنا بھی ایک سمندر ہوتا

Kash anso jama kiye hote

Aj apna bhi ak samandr hota

●○●○●○●○●○●○●○●

پلکوں کی حد کو توڑ کر دامن پہ آ گرا
اک آنسو میرے صبر کی توہین کر گیا

Palkoon ki had ko tor kar daman par aa gira

  Ik anso mre sabr ki toheen kar gya

●○●○●○●○●○●○●○●

رونے کے لیے ضروری نہیں آنکھوں کا نم ہونا
دل کا رونا آنسوں کے رونے سے زیادہ اذیت دیتا ہے

Rone ke liye zorori nahi ankhoona ka nam hona

Dil ka rona ansoo Ke Rone se zyada aziyat deta hai 

●○●○●○●○●○●○●○●

ٹوٹے ہوئے خوابوں کی چبھن کم نہیں ہوتی
اب رو کے بھی آنکھوں کی جلن کم نہیں ہوتی

Tootay hue khuabo ki jalan kam nahi hoti

Ab ro ke bhi in ankhoon ki jalan kam nahi hoti

●○●○●○●○●○●○●○●○

ہم اذیت کے اس مقام سے گزر رہے ہیں
بغیر آنسوں کے روئے جارہے ہیں

Hm aziyat ke is muqaam se guzar rahe hain 

Bagir ansoou ke roye ja rahe hain

●○●○●○●○●○●○●○●○

جو نیند رونے کے بعد آتی ہے
وہ نیند کی گولیوں سے بھی نہیں آتی

Jo nend Rone ke baad aati hai

Wo nend ki goliyoon se bb nahi aati

●○●○●○●○●○●○●○●○

صبح جب اٹھو تو آنکھ میں ایک آنسو ضرور ہوتا ہے

تیری یاد کا تیرے خواب کا اور تیرے انتظار کا

Suba jab utho to ankh main ik anso zror hota hai

Teri yad ka tere khuab ka or tere intzar ka

●○●○●○●○●○●○●○●○●

کبھی گلے سے مل کر روئے تو کبھی تنہا ہو کر روئے

سجدوں سے فارغ ہوئے تو دعا میں تیری طلب کر کے روئے

Kbi galay se mil kr roye to kabi tanha roye

Sajdo ss farig hue to dua Main teri talab kar ke roye 

●○●○●○●○●○●○●○●○●

اب تو ہم روئیں گے ساون کی بارش جیسے
سنا ہے میرے رونے سے اسے تسکین ملتی ہے

Ab to hm royain ge sawan ki barish jese

Suna hai Mere Rone se ise taskeen milti hai

●○●○●○●○●○●○●○●○●

اپنے آنسو صاف کرنے کے بجائے زندگی سے
ان لوگوں کو صاف کریں جو ان کا باعث ہیں
Apne ansoo saaf Krne ki bajaye zindagi se

Un logo ko saf krain jo inka Bayes hain

●○●○●○●○●○●○●○●○●

میرے خیال میں اگر آنسو نہ ہوتے تو انسان اپنے جذبات کی شدت سے پاگل ہو جاتا
Mere kheyal main agr ansoo na hote to inssn apne
Jazbaat ki shidat se pagal hoo jata

●○●○●○●○●○●○●○●○●
بدلا ہوا آج مرے آنسوؤں کا رنگ
کیا دل کے زخم کا کوئی ٹانکا ادھڑ گیا
Badla hua aj Mere ansoon ka rang
Kya dil ke zakhm ka koi taanka udhar gya

●○●○●○●○●○●○●○●○●

کون پریشان ہوتا ہے تیرے غم سے
وہ اپنی ہی کسی بات پہ رویا ہو گا

Kon pareshan hora hai tere gam se

Wo apni hi ksii baat pe roya hoga

●○●○●○●○●○●○●○●○●

بدلا ہوا آج مرے آنسوؤں کا رنگ
کیا دل کے زخم کا کوئی ٹانکا ادھڑ گیا

badla hua aj Mere anson ka rang

Kya dil ke zakhm ka koi taanka udha gya

●○●○●○●○●○●○●○●○●

میرے خیال میں اگر آنسو نہ ہوتے تو انسان اپنے جذبات کی شدت سے پاگل ہو جاتا

mre kheyal main agr asnoo na hote to insan apne jazbaat ki shidat se pagal ho jata

●○●○●○●○●○●○●○●○●

ٹپک پڑتے ہیں آنسو جب یاد تمہاری آتی ہے
یہ وہ برسات ہے جس کا کوئی موسم نہیں ہوتا

Tapak parte hain anso jab yad tumari aati hai

Ye wo barsat hai jis ka koi mosam nahi hota 

●○●○●○●○●○●○●○●○●

جو انسان آنسووں کا درد سمجھتا ہے
وہ دوسروں کو آنسو کبھی نہیں دیتا

Jo insan ansoon ka dard smjta hai.

Wo dosron ko ansoo kabu nai deta 

●○●○●○●○●○●○●○●○●

یہ بھی اچھا ہوا کے قدرت نے رنگین نہیں رکھے آنسو
ورنہ جس کے دامن پر گرتے وہ تو بدنام ہو جاتا

Ye bhi acha hua k qudrat ne rangeen nahi rakhe anso

Warna jis ke daman pe girte wo to badnam ho jata 

●○●○●○●○●○●○●○●○●

آنسوؤں کا وزن تو نہیں ہوتا
پھر بھی ان کے گر جانے سے
دل کا بوجھ ہلکا ہو جاتا ہے

Ansoou ka wazan to nahi hoota

Phr bhi inke gir jaane se

dil ka bojh halka hoo jata hai

●○●○●○●○●○●○●○●○●

بہت مضبوط ہوتے ہیں وہ لوگ جو اکیلے میں سب سے چھپ کر روتے ہی

Bht mazboot hote hain wo log jo akele main sab se Chup kar rotay hain 

●○●○●○●○●○●○●○●○●

جن کی آنکھیں بات بات میں بھیگ جاتی ہیں
وہ کمزور نہیں ہوتے بلکہ دل کے سچے ہوتے ہیں

Jin ki ankhain bat bat main bheeg jaati hain

Wo kamzoor nahi hote balke dil ke suchay hote hain

●○●○●○●○●○●○●○●○●

تمہیں حسرت تھی نہ دھوپ میں بارش دیکھنے کی میری جان
آ دیکھ یہ دیوانہ تیری یاد میں دن رات روتا ہے

Tumain hasrat thi na dhoop main barish daikhne ki mri jan

Aa daikh ye dewana teri yaad main din raat rota hau

●○●○●○●○●○●○●○●○●

کوئی بھی آپ کے آنسوں کا مستحق نہیں ہے
لیکن جو ان کا مستحق ہے وہ آپ کو رولائے گا ہی نہیں

Koi bhi apke ansoon ka musteheq nai hai

Lekin jo in mustehq hai wo apko rulaye ga e nai

See also  Shayri picture in urdu

●○●○●○●○●○●○●○●○●

تم نے ہی کہا تھا آنکھ بھر کے دیکھ لیا کرو
اب آنکھ تو بھر آتی ہے پر تم نظر نہیں آتے

tumne e kaha tha k ankh bhar ke daikh lia kro

ab ankh to bhar aati hai par tum nazar nai ate

●○●○●○●○●○●○●○●○●

‏تمہاری آنکھ سے ٹپکے تو معتبر ٹھہرے
ہماری آنکھ سے بہتا رہا فقط پانی

Tumarii ankh se tapkay to motbar thehre 

Hmari ankh se behta raha faqat paani

●○●○●○●○●○●○●○●○●

تیرے لوٹ آنے کے انتظار میں یہ دل ناداں
کبھی رو کے تڑپتا ہے تو کبھی تڑپ کے روتا ہے

Tere lot aane ke intazar main ye dil na daan

Kabi ro ke tarapta hai to kabi tarap ke rota hai

●○●○●○●○●○●○●○●○●

کبھی دیکھا نہ آنکھ بھر کے اسے
جب دیکھا تو آنکھ بھر آئی

Kabi daikha naa ankh bhar ke ise 

Jab daikha to ankh bhar aai

●○●○●○●○●○●○●○●○●

سوچا بھی نہیں تھا ایسے بھی زمانے ہونگے
رونا بھی ضروری ہوگا آنسو بھی چھپانے ہونگے

socha bhi nahi tha aise b zamane hoon ge

rona bhi zorori hooga ansoon b chupane hoon ge

●○●○●○●○●○●○●○●○●

کبھی دیکھا نہ آنکھ بھر کے اسے
جب دیکھا تو آنکھ بھر آئی

Kabhi daikha na ankh bhar k ise

Jab daikha to ankh bhar aai

●○●○●○●○●○●○●○●○●

سوچا بھی نہیں تھا ایسے بھی زمانے ہونگے
رونا بھی ضروری ہوگا آنسو بھی چھپانے ہونگے

socha bhi nahi tha aise b zamaane hoon ge

rona bhi zrori hooga ansoo bhi chupaane hoon ge

●○●○●○●○●○●○●○●○●

آنسو بھی کمبخت اک پریشانی ہے
خوشی اور غم دونوں کی نشانی ہے
سمجھنے والوں کے لئے انمول ہے
اور نہ سمجھنے والوں کے لئے پانی ہے

Ansoo bhi kambakht ik pareshani hai

Khushi or gam dono ki nishani hai

samajne waloon k liye anmol hai

or na samjhne waloon k liye paani hai

●○●○●○●○●○●○●○●○●

دل میں جب جگہ نہیں بچتی
درد آنکھوں میں پھیل جاتا ہے

Dil ma jaga ni buchti

Dard Ankho ma Phail jata Hn

●○●○●○●○●○●○●○●○●

بہت اندر تک تباہی مچا دیتا ہے
وہ اشک جو آنکھوں سے بہہ نہیں پاتا

Bhut Andr tk tbahi mucha daita Hn 

Wo Ashq Jo ankho sa bh ni pata

●○●○●○●○●○●○●○●○●

رولایا نہ کر اے زندگی مجھے
چپ کرانے والا اب کوئی نہیں

Rolaya na kr A zindagi mjhe

Chup kranay wala ab koi ni

●○●○●○●○●○●○●○●○●

صبر کی حد بھی ہوتی ہے

کتنا کوئی پلکوں پے سنبھالے پانی

Saber ki b had hoti ha 

Kitna koi palkon pay sambhaly pani 

………………….

تمہیں کیا خبر آنکھوں میں بھرے آنسؤں کو وآپس حلق تک اتارنا اور پھر مسکرانا کس قدر اذیت دیتا ہے

Tumhay kiy akhaber ankhin mai bhary ansoyon ko wapas 

Halaq tak otarnay or phir muskrana kis qader aziyat deta h

………………….



آنسو کے بوجھ سے کہیں کشتی نہ ڈوب جائے

یہ سوچ کر کبھی روتا نہیں ہوں میں

Anso kay boaj say kahyin kashti na doob jaya 

Ya soch kar kbhi rota nae hon ma

………………….

تم تو لکھتے رہے میری آنکھوں پہ غزلیں

تم نے کبھی پوچھا نہیں کہ روتے کیوں ہو

Tum likhty rahy mari ankhon py gazlyin 

Tum ny kabhi pocha nae ky rotay kun ho 

………………….

جن کی قسمت میں رونا لکھا ہو

وہ مسکرائیں بھی تو آنسو نکل آتے ہیں

Jin ki qisamt ma rona likha ho 

Wo muskarayin bhi to anso nikal atay hn

………………….

جن ﺁنسوؤں کو ﺁنکھـوں سے بہنـے کـا رﺍستـہ نہیں ملتا 

وہ حلق میں کڑواہٹ گھول دیتـے ہیں

Jo ansoyon ko ankhon say bhanay ka rasta nae milta 

Wo halaq mau karwahat ghool detay hain

………………….

کتنی خاموش اس کی مسکراہٹ تھی 

شور بس آنکھ کی نمی میں تھا

Kitni khamoshi is ki muskaraht thi 

Shore bus ankh ki nami ma tha

………………….

کاش کوئی ہوتا جو ہمارے آنسوؤں کا بھرم رکھتا

یہاں تو ہر شخص نے رولانے کی قسم کھا رکھی ہے

Kasah koi hota jo hamary ansoyon ka bharm rakta 

Yahan to har shakas nay rolanay ki qasim kha rakhi ha

………………….

پانی سے بھری آنکھیں لے کر مجھے گھورتا رہا

وہ آئینے میں شخص پریشان بہت تھا

Pani say bahi ankhayin lay kar muja ghorta raha 

Wo ainay mai shakash preshan tha  

………………….

رات بھر سسکیاں لیتا ہے کوٸی شخص یہاں

کبھی دیوار سے لگ کر کبھی دروازے سے

Rat bahi siskiyan leta hai koi skhash yahan 

Kabhi dewar say lag kr kabhi darwazay say…

……………….

آنسو میرے تھم جائیں تو پھر شوق سے جانا 

ایسے میں کہاں جاؤ گے برسات بہت ہے

Anso meray tham jayin to phir shoq say jana 

Isay ma kahan jayo gay barsat buht ha

………………….

تجھے بھلانا نہیں ممکن اس کا تقاضا نہ کیا کر 

آنکھیں اندھی بھی ہو جائیں تو آنسو رکا نہیں کرتے 

Tujay bhoolna nae mumkin isy taqazay na kiya kar 

Ankahyin andhi bhi ho jayin to anso tuka nae karty

………………….



ہم نے محبت میں ایسی بھی گزاری راتیں

جب تک آنسو نہ بہے دل کو آرام نہ آیا.

Hum nay muhabat ma asi bhi guzari ratayin 

Jab tak anso na bahay dill. Ko aram na aya

………………….

بہت جی چاہتا ہے شانوں پہ تیرے سر رکھ کر 

بہا ڈالوں وہ سب آنسو جو میرے دل میں چھبتے ہیں

Jab jee chata ha shano pay teray sir karh kar 

Baha dalin wo sab anso jo meray dill. Ma chubhaty hain 

………………….

خدا گواہ ہے ہم جب بھی محبوب کی یاد میں رو ئے 

نئے انداز سے تڑپتے نئے انداز سے روئے 

Khudha gawa hai hum jab bahi mahbob ki yad mai roya 

Naya andaz say yarpay naya andaz sy roya

………………….

مزا برسات کا لینا ہے تو ان پلکوں کے نیچے آ بیٹھو

وہ برسوں میں برستی ہے یہ برسوں سے برس رہی ہے

Maza betsat ka lena h to i. Palkon kay nechay a betjo 

Wo barson mai barsati hai ya barson say baras rai ha

………………….

کچھ لوگ ہوتے ہیں آنسوؤں کی طرح زندگی میں

پتہ ہی نہیں لگتا کہ ساتھ دے رہے ہیں یا ساتھ چھوڑ رہے ہیں

Kuch loag hoty hain ansoyon ki tarha zindagi mai 

Pata hi nae lagta kay djat day rahay hain ya sahat chore rahy hn

………………….

یوں حسرتوں کے داغ محبت میں دھو لیے

خود دل سے دل کی بات کہی اور رو لیے

Yoon hasraton kay daag muhabat mai dho liya 

Khud dill say dill ki bat khahi or ro liya

………………….

رونا تو ختم ہی نہیں ہوتا زندگی بھر 

آنسو سارے بہا کے بھی دیکھے ہیں 

Rona to khatm hi nae hota zindagi bhar 

Anso sary bha kay bhi dekahy hain

………………….

یہ ضروری تو نہیں ہر کوئی رو کے دیکھائے

خشک آنکھوں میں بھی سمندر ہوا کرتے ہیں

Ya zarori to nae har koi ro kay dekhaya 

Khushk ankhon mai bhi samander hoa karaty hn

………………….

لگتا ہے تعلق نہیں توڑا ابھی دل نے

یہ آنکھ تیرے نام سے بھر آتی ہے

Lagta hai taluq tora abhi dill nay 

Ya ankah teray naam say bhar ati hai

………………….

ہم بھی دنیا میں امیر ہوتے

اگر ہمارے آنسوں کی کوئی قیمت ہوتی

Hum bhi duniya mai ameer hotay 

Ager hamray anso ki koi qimat hoti

………………….

آنسوں کی ضمانت بھی جہاں کام نہ آئی

وہ شخص لفظوں کا یقین کیا خاک کرے گا؟

Ansoyon ki zamanat bhi jahna kam na ayi 

Wo shkahs lafzon ka yaqeen kiya khak kary ga

………………….

میں تو اس وقت سے ڈرتا ہوں کہ وہ پوچھ نہ لے

یہ اگر ضبط کا آنسو ہے تو ٹپکا کیسے

Mai to is waqat say darta hon ky wo poch na lay 

Ya ager zabat ka anso hai to tapkata kesay

………………….

کبھی تمہارے سامنے رو پڑوں تو سمجھ لینا

یہ میری بے بسی کی آخری حد تھی

Kabhi tumhary smany ro paron to smja lena 

Ya mari bay basi ki akhari hd thi

………………….

ہزاروں غم سہے لیکن نا آیا آنکھ میں آنسو 



ہم اہل ظرف ہیں پیتے ہیں چھلکایا نہیں کرتے

See also  Mazahiya shayri in urdu

Hazaron ghum sahhay laki na aya ankh ma anso 

Hum ahle zaraf hi. Petay hin chalkya nae karty

………………….

راہ تکتے ہوئے جب تھک گئیں آنکھیں میری 

پھر تجھے ڈھونڈنے میری آنکھ سے آنسو نکلے

Rah taktay jab thaq gayin ankahyi mari 

Phir tujay dhondaty mari ankh say anso niklay

………………….

کبھی کبھی انسان اتنا بےبس ہو جاتا ہے کہ 

امیدیں دعائیں یقین اور ہمت سب آنکھوں کے راستے بہنے لگتے ہیں 

Kabhi kabhi insan itna bybus ho jata h kay omeedyin duayin or himat sba ankhon kay rsaty bhany laghty hain

………………….

میں آنسو ہوں تم پتھر ہو تم آب کی طاقت کیا 

میں قطرہ قطرہ ٹپکوں گا تم ذرہ ذرہ بکھرو گے

Mai anso hon tum phater ho tum ab ki taqat kiya 

Mai qatra qatra tapkon ga tum zara zara bikro gay

………………….

بےشک رونے سے حالات بہتر نہیں ہوتے

مگر دل ضرور ہلکا ہو جاتا ہے

Beshak ronay say halat bhatter nae hoty 

Mager dill zaror halka ho jata ha

………………….

کتنے غرور میں ہے وہ مجھے چھوڑ کے

انہیں معلوم نہیں میرے آنسو مجھے تنھا ہونے نہیں دیتے

Kitnay garoor mai hai wo muja chore kay 

Inhinyin mallom nae meray aonso muja tanha hony nae detay

………………….

رونے سے اگر سنور جاتے حالات کسی کے 

تو ہم سے زیادہ کوئی خوش نصیب نہیں ہوتا

Ronay say ager sanwar jaty hlat kisi kay 

To hum say zayda koi khush naseeb nae hota

………………….

شکر ہے کہ آنسوں کا کوئی رنگ نہیں ہوتا ورنہ

صبح کہ اجالوں میں رنگین تکیے سب کے راز کھول دیا کرتے

Sukar hai kay ansonyon ka koi rang nae hota warna 

Subha ky ojalon mai rangeen takiya sab ky raz khol deiya karty

………………….

‏ٹھنڈے پانی میں پھینک کر آنسو

ہم نے دریا جلا دیے صاحب

Thanday pani mai ohank kar anso 

Hum ny darya jalla dia sahib

………………….

جانتے ہو روتے وقت آنسوں کیوں رم ہوتے ہیں 

کیونکہ اس وقت دل جل رہا ہوتا ہے

‏ٹھنڈے پانی میں پھینک کر آنسو

ہم نے دریا جلا دیے صاحب

Jnaty ho rotay waqat anson kun kam ho jaty han 

Kun kay is waqat dill jall raha hota hai 

Thanday pani mai phank kar anso 

Hum nay darya jalla diya sahib

………………….

تم نے چھوڑا جب سے آنسو پوچھنا

ہم کو رونے کا مزہ آتا نہیں

Tum ny chora jab say anso pochna 

Hum ko ronay ka maza ata nae

………………….

سچے پیار میں نکلے آنسو اور روتے ہوئے بچے کے آنسو ایک جیسے ہوتے ہیں 

کیونکہ دونوں کو پتا تو ہے کہ درد کیا ہے پر کسی کو بتا نہیں سکتے

Suchay payar mai niklay anso or rotay hoya bachay kau anso ak jesay hoty hain

Kun kay dono ko pata hi kay dard kiya ha par kisi ko bata nae skaty

………………….

‏موتی تو نہیں تھے کوئی پلکوں سے جو چنتا

ہم آنکھ سے ٹپکے ہوئے آنسو کی طرح تھے

Moti to nae thy koi palkon say jo chunta

Hum ankah say taptaky hoya anso ki tarha thay

………………….

مسکان بنائے رکھو تو سب ساتھ ہیں

ورنہ آنسو کو تو آنکھوں میں بھی پناہ نہیں ملتی

Muskan banya rakho to sav shat hain

Warna anso ko to ankhon mai bhi panah nae milti

………………….



کسی کو دیا گیا ایک آنسو عمر بھر کی عبادتوں پہ پانی پھیر سکتا ہے

Kisi ko dia gaya ak amso umar bhar ki ibadaton pay pani pair sakta ha

………………….

کتنے غرور میں ہے وہ مجھے چھوڑ کے

انہیں معلوم نہیں میرے آنسو مجھے تنھا ہونے نہیں دیتے

Kitnay garor mai hai wo mujay chore kay 

Inhhayin maloom nae meray anso muja tanha honay nae detay

………………….

رونے سے اگر سنور جاتے حالات کسی کے 

تو ہم سے زیادہ کوئی خوش نصیب نہیں ہوتا

Ronay say ager sanwar jaty halat kisi kay 

To hum say zayda koi khush naseeb nae hotay

………………….

شکر ہے کہ آنسوں کا کوئی رنگ نہیں ہوتا ورنہ

صبح کہ اجالوں میں رنگین تکیے سب کے راز کھول دیا کرتے

Sukar hai ky  anso ka koi rang nae hota warna 

Subha kay ojalaon mi rangeen takiyay sab kay raz khol diya karta

………………….

‏ٹھنڈے پانی میں پھینک کر آنسو

ہم نے دریا جلا دیے صاحب

Thanday pani mai phank kar anso 

Hum nay darya jala diya sahib 

………………….

جانتے ہو روتے وقت آنسوں کیوں گرم ہوتے ہیں 

کیونکہ اس وقت دل جل رہا ہوتا ہے

Janty ho waqat ansoyon kun garam hoty hain

Kunky is waqat dill jall raha hota hai

………………….

تم نے چھوڑا جب سے آنسو پوچھنا

ہم کو رونے کا مزہ آتا نہیں

Tum ny chora jab say anso pochna 

Hum ko ronay ka maza ata nae

………………….

سچے پیار میں نکلے آنسو اور روتے ہوئے بچے کے آنسو ایک جیسے ہوتے ہیں 

کیونکہ دونوں کو پتا تو ہے کہ درد کیا ہے پر کسی کو بتا نہیں سکتے

Suchay payar mai niklay anso or rotay hoya bachay kau anso ak jesay hoty hain

Kun kay dono ko pata hi kay dard kiya ha par kisi ko bata nae skaty

………………….

‏موتی تو نہیں تھے کوئی پلکوں سے جو چنتا

ہم آنکھ سے ٹپکے ہوئے آنسو کی طرح تھے

Moti to nae thay koi palkon say ho chunta 

Hum ankah say tapkaty hoa anso ki tarha tahy

………………….

مسکان بنائے رکھو تو سب ساتھ ہیں

ورنہ آنسو کو تو آنکھوں میں بھی پناہ نہیں ملتی

Muskan banaya raho to sab sajat hain 

Warna anso ko to anhokon mai bahi pana nae milati

………………….

کسی کو دیا گیا ایک آنسو عمر بھر کی عبادتوں پہ پانی پھیر سکتا ہے

Kisi ko dia gaya ak anso umar bhar ki Abadton pay pani phair skta hai

………………….

ضبط غم اتنا آسان نہیں 

آگ ہوتے ہیں وہ آنسوں جو پئیے جاتے ہیں

Zabat ghum. Itna asan nae 

Aag hoty hn wo anso jo piya jatay hain

………………….

آج آنسو تم نے پونچھے بھی تو کیا 

یہ تو اپنا عمر بھر کا کام ہے

Aj anso tum ny ponchy bhi to kiya 

Ya to apna umar bhar ka kam hai

………………….

محبت میں ایسی چوٹ کھائی ہم نے 

کہ اب درد بھی ہو تو آنسو نہیں نکلتے 

Muhabat mai asi chote kahyi hum nay 

Ky ab dard bhi ho to anso nae niklty

………………….



جی بھر کر اسے جاتے ہوئے دیکھنے تو دے 

اے آنکھ ٹھہر جا؟ تجھے رونے کی پڑی ہے

Jee bhar kar isay jatau hoya dekhny to day 

Ay ankah thahar ja tujay rony ki pari ha

………………….

خاموش رہنے پر بھی انہیں ہو جاتی تھی فکر میری

اب تو آنسو بہانے پر بھی کوئی ذکر نہیں ہوتا

Khamosh rahany par bhi inhinyin ho jati tji fikar mari 

Ab to anso bahnay par bhao koi zikar nae karta 

………………….

جب انسان تقدیر سے ہارتا ہے تو

اس کا بس صرف آنسوؤں پر چلتا ہے

Jab Insnn taqdeer say harta hai to 

Is ka bus sirf ansonyon par chalta ha

………………….

آ کے دیکھے جو کسی صبح وہ تکیہ میرا

جو سمجھتا ہے مجھے رونا نہیں آتا

Aa ky deakh jo kisi subha wo takiya mrra 

Jo smjata hi muja rona nae ata

………………….

مدتوں بعد جو دیکھی اس نے میری خشک آنکھیں

پھر یہ کہہ کے رلا گیا کہ لگتا ہے سنبھل گئے ہو

Mudaton bad jo dekahi is ny mari khusk ankahyin 

Phir ya kha kay rula gaya kay lagta hai sumbhal gaya ho

………………….

صبح جب اٹھوں تو آنکھ میں ایک آنسو ضرور ہوتا ہے

تمہاری یاد کا تمھارے خواب کا تمھارے انتظار کا

Subha jb otho to ankah ma ak anso zaror hota hai 

Tumhari yad ka timhary khawab ka tumhary inzar ka

………………….

بادل تو بہت ہیں مگر اس شہر میں ہم نے 

آنکھوں کے سوا کچھ بھی برستے نہیں دیکھا

Badal to buht hain magaer is shahar mai hum nay 

See also  Shero shayri in urdu 2018

Ankhon ky siwa kuch bhi bardaty nae dekha 

………………….

برسوں گزر گئے رو کر نہیں دیکھا 

آنکھوں میں نیند تھی سو کر نہیں دیکھا 

وہ کیا جانے درد محبت کا 

جس نے کسی کا ہو کر نہیں دیکھا

Berson guzar gaya ro kar nae dekha 

Ankhon mai neend tji so kar nae dekha

Wo kiya janay dard muhabt 

Jis nay kisi ka ho kar nae dekha 

………………….

کتنے معصوم ہوتے ہیں یہ آنکھوں کے آنسو بھی 

یہ نکلتے بھی ان کے لیے ہیں جنہیں پرواہ تک نہیں ہوتی

Kitnay masoom hoty hai. Ya ankhon ky anso bhi 

Ya na niklhty bhi inky liya hin jinhayin parwa tak nae hoti

………………….

یہ ہچکیاں تو محبت کی دین ہوتی ہیں 

اور وہ جھوٹ بولتی ہے کھڑکی میں ہاتھ آیا تھا

Ya hickiyan to muhabat ki deen hoti hain 

Or wo jhoor bolti hai khirki mai hat aya tha

………………….

جنہیں ہم پلکوں پر بٹھاتے ہیں 

وہی اکثر پلکوں کو بهگا دیتے ہیں

Jinhayin hum palkon par bethaty hain 

Wohi akser palkon ko bhega detay hain

………………….

اس نے کہا تمہاری آنکھیں بہت پیاری ہیں 

ہم نے کہا تیز بارش کے بعد موسم اکثر پیارا ہی لگتا ہے

Is nay kaha tumhari ankhiyn buht payari hain

Hum nay kaha taiz barish kay bad mosma akser paya hi lagta ha

……………….

سجا رکھی تھی ہونٹوں پر ہنسی بہت 

بے لگام درد مگر آنکھوں سے بہہ نکلا

Saja rakhi thi honton par hunsi buht 

By lagam dard mager ankhon say bha nikla

………………….

کتنا روتی تھی میں تیری خاطر 

اب جو سوچوں تو ہنسی آتی ہے

Kitna roti thi mai tari khatir 

Ab jo shachon to hunsi ato ha

………………….

مسکراہٹ جھوٹی ہو سکتی ہے مگر 

آنکھ سے گرتا ہوا آنسو نہیں

Muskarhat jhooti hp skati ha magaer

Ankh say girta hoa ansko nae

………………….



آنسوؤں سے عقیدت یونہی تو نہیں مجھ کو 

یہی ساتھ نبھاتے ہیں جب کوئی نہیں ہوتا…

Ansoyon say aqidat yoon hi to nae muja 

Yahi shat nabhaty hin jab koi nae hota

……………….

ان آنسوں میں سمندر کی گہرائی ہے

اترنے کی کوشش مت کرو ڈوب جاو گے

In ansoyon ma smander ki gharayi hai 

Orathy ki koses mat karo doob jayo gay

………………….

الوداع کہہ چکے ہیں تمہیں

جاو آنکھوں پہ دھیان نہ دو

Alvida kha chukay hain tumhay 

Jayo anhokon pay dehan na do

………………….

ہنسنے پہ بھی آجاتے ہیں بے ساختہ آنسو 

کچھ لوگ مجھے ایسی دعا دے کے گئے ہیں

Hunsanay pay bhi ajatu hain bay sakhta anso 

Kuch log muja aisi dua day gaya hin

………………….

پلٹ کر دیکھا تھا جس طرح اس نے مجھے 

میں آنکھوں پہ ہاتھ نہ رکھتا تو دریا بہہ جاتا

Palat kar dekha jis tarha muja 

Mai ankhon pay har na rkahta to darua bha jata

………………….

 انکار سا کر دیا آنسوں نے آنکھوں میں آنے سے پہلے 

کہ کیوں گراتے ہو ہمیں اتنا اک گرے ہوئے شخص کی خاطر

Inkar sa kar dia ansoyon ny ankhon mae anay say phlay 

Kau kun girtay ho hamay itna ik girau hoya shalhas ki khatir

………………….

کتنی خاموش سی مسکراہٹ

تھی 

شور بس آنکھ کی نمی میں تھا

Kitni khamosh si muskaraht thi 

Shore bus ankh ki nami mai tha

………………….

پانی دریا میں ہو یا آنکھوں میں 

گہرائی اور راز دونوں میں ہوتے ہیں.

Pani darya mai ho ya ankhon mai 

Gharayi or raaz dono mai hotay hain

………………….

مسکراتی آنکھوں سے افسانہ لکھا تھا

شاید آپ کا میری زندگی میں آنا لکھا تھا

تقدیر تو دیکھو میرے آنسوؤں کی

ان کا بھی آپ کی یاد میں بہہ جانا لکھا تھا

Muskarati ankhon sy afsana likha tha 

Shayed ap ka mari zindgai mai ana likha tha 

Taqdeer to dekho meray ansoyon ki 

In ka bhi ap ki yad ma bha jana likha tha

………………….

‏پوچھا تھا اس نے حال بڑی مدتوں کے بعد 

‏کچھ پڑ گیا ہے آنکھ میں یہ کہہ کے رو پڑے

Pocha tha is nay hall bari mudaton ky bad 

Kuch parh gaya hai ankh mai ya kha kay ro paray

………………….

آنسو ٹپکے تو چل دیا اٹھ کر 

بات ساری نہیں سنی اس نے

Anso tapkay to chal dia oth kar bat sari nae suni is nay

……………….

بار بار آنسو صاف کرنے کے بجاۓ اپنی زندگی سے اس کو ہی صاف کر دے جو اپ کو آنسوؤں کی وجہ بنتا ہے

Bar bar anso saaff karany kay bajaya apni zindagi say is ko hi saff kar day jo ap ko ansoyon ki waja banta ha

………………….

الوداع کہہ چکے ہیں تمہیں

جاو آنکھوں پہ دھیان نہ دو.

Alvida kha chukay hain tumhay 

Jayo ankhon pay dehan na do

………………….



ہنسنے پہ بھی آجاتے ہیں بے ساختہ آنسو 

کچھ لوگ مجھے ایسی دعا دے کے گئے ہیں

Hunsanay pay bhi ajaty hain bay sakhta anso 

Kuch log muja asi dua kay gaya han

………………….

پلٹ کر دیکھا تھا جس طرح اس نے مجھے 

میں آنکھوں پہ ہاتھ نہ رکھتا تو دریا بہہ جاتا

Palat kar dekha tha jis tarha is nay muja 

Mai ankho pay hat na rkhta to darya bha jatay

………………….

 انکار سا کر دیا آنسوں نے آنکھوں میں آنے سے پہلے 

کہ کیوں گراتے ہو ہمیں اتنا اک گرے ہوئے شخص کی خاطر.

Inkar sa kar dia ansoyon nay ankhon mai anay say phaly 

Kay kun giraty ho humay itna ik girau hoay shakhas ki khatir

………………….

کتنی خاموش سی مسکراہٹ تھی 

شور بس آنکھ کی نمی میں تھا

Kitni khamosh si muskaraht 

Shore bus ankah ki nammi mai tha 

………………….

پانی دریا میں ہو یا آنکھوں میں 

گہرائی اور راز دونوں میں ہوتے ہیں.

Pani darya mai ho ya ankho ma 

Gharayi or raaz dono mai hotay hain

………………….

مسکراتی آنکھوں سے افسانہ لکھا تھا

شاید آپ کا میری زندگی میں آنا لکھا تھا

تقدیر تو دیکھو میرے آنسوؤں کی

ان کا بھی آپ کی یاد میں بہہ جانا لکھا تھا

Shaayed ap ka mari zindgai mai ana likha tha 

Taqdeer to dekho meray ansonyon ki 

In ka bhi ap ki yad mai bha jana likha tha

………………….

‏پوچھا تھا اس نے حال بڑی مدتوں کے بعد 

‏کچھ پڑ گیا ہے آنکھ میں یہ کہہ کے رو پڑے

Pocha tha is nay hall bari mudaton kay bad

Kuch parh gaya hai mai anhon ma ya kaha kau ro paray

.………………….



آنسو ٹپکے تو چل دیا اٹھ کر 

بات ساری نہیں سنی اس نے

Anso tapkaty to chal dia oth kar 

Bat sari nae suni is nay 

………………….

بار بار آنسو صاف کرنے کے بجاۓ اپنی زندگی سے اس کو ہی صاف کر دے جو اپ کو آنسوؤں کی وجہ بنتا ہے

Bar bar anso saaff karny kay bajaya apni zindagi say is ko hi saaf kar day jo ap ko anso ki waja banta hai

………………….

روتے روتے تھک گئی ہیں آنکھیں 

اب بس آ جاو لوٹ کر

Rotay rotay thaq gayk hain ankayin 

Ab bus ajayo loat kar

………………….

وہ تو ہنستا ہے روبرو میرے

کوئی روتا ہے اس کی آنکھوں میں .

Wo to hunsta hai hai robaro meray 

Koi rota hai is ki ankhon mai

………………….

یاد آتی ہے تو نم ہو جاتی ہیں آنکھیں

کیا تصور میں ستانے کی قسم کھائی ہے تم نے

Yad ati hai to num ho jati hain ankhyin

Kiya taswar mai satany ki qasim kahyi hai tum nay

………………….

روٹھی ہوٸی آنکهيں کبھی جھوٹ نہیں بولتیں

کیونکہ آنسو تب ہی آتے ہیں جب اپنا کوٸی درد دیتا ہے

Rothi hoi ankhyin kabhi jhoot nae bolti 

Kun kay anso tab hi atay hain jab apna koi dard deta hai

………………….



 آنسو سے عقیدت یونہی نہیں مجھ کو 

یہ تب ساتھ نبھاتے ہیں جب ساتھ کوئی نہیں ہوتا

Anso say aqidat yoonhi nae muj ko 

Ya tab shat nibathy hain jab sahat koi nae hota 

………………….