Badnam Poetry in Urdu

میں صرف اس کی ذمہ دار ہوں جو میں نے کہا 

اس کی نہیں جو آپ سمجھیں 

Ma sirf us ki zinaydar hoon jo ma nay kaha

in ki nahi jo ap samjhain

○●○●○●○●○●○●○●

یوں ہی نہیں میں تیرے عشق میں بدنام

مجھے میسر ہے اس بدنامی میں سکون اپنا

Youn hi nahi ma taray ishq ma badnam

mujhy mayasar hay is badnamii ma sakoon apna

○●○●○●○●○●○●○●

ہمیں تو پیار کے دو لفظ بھی نصیب نہیں ہوئے 

اور بدنام ایسے ہوئے جیسے عشق کے بادشاہ تھے ہم 

hamay to pyar kay doo lafzz be naseeb nahi hovat

or badnam asy hovay jasay ishq kay badshaa thay ham

○●○●○●○●○●○●○●

نہ کامیاب ہوتا ہے نہ ناکام ہوتا ہے 

آدمی عشق میں بس بدنام ہوتا ہے

Naa kamyab hota hay naa kam hota hay

admii ishq ma bass badnam hota hay

○●○●○●○●○●○●○●



ہم تو برے تھے برے ہیں برے ہی رہیں گے 

فکر تو وہ کریں جو بولتے کچھ ہیں 

کرتے کچھ دکھاتے کچھ اور ہوتے کچھ ہیں

ham to buray thay buray hain buray he rahain gain

fikar to wo karain jo boltay kuch hain

karty kuch dekhtay kuch or hotay kuch hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

بس کر دیا اب نظریں جھکا کر نظر انداز کرنا

اب زبان کھینچ لیں گے کردار پر انگلی اٹھائی تو

 

bas kar deya ab nazrain jhukaa kar nazar andaz karna

ab zuban khench lain gay kardar par unglii uthai too

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏یہ میرا فرض بنتا ہے میں اُس کے ہاتھ دھلواؤں 

سنا ہے اُس نے آج میری ذات پہ کیچڑ اچھالا ہے

ya mera farzz banta hay ma us kay hath dhulwaa

suna hay us nay aj mari zaat pay keechar ujhala hay

○●○●○●○●○●○●○●

مجھ کو برا کہتے ہو

زمانہ نہیں دیکھا تم نے

mujh ko bura kehty ho

zamana nahi dekha tum nay

○●○●○●○●○●○●○●

جو کبھی محفلوں میں ذلیل کیا کرتے تھے 

وہی لوگ اب تنہائی میں سلام کو ترستے ہیں

jo kabi mehfilon ma zaleel karty thay

wohi log ab tanhai ma salam ko tarsatay hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

کسی کی طرف انگلی اٹھانے والوں باقی انگلیوں کا رخ تو دیکھ لو کس کی طرف ہے

kisi ki tarf unglii uthany walon bakii ungliyon ka

rukh to dkh lo kis kibtaraf hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

ہم بھی تمہیں ستانے پر اتر آئے تو کیا ہوگا

تمہارا دل دکھانے پر اتر آئے تو کیا ہوگا

ہمیں بدنام کرتے پھرتے ہو اپنی محفل میں

اگر ہم سچ بتانے پر اتر آئے تو کیا ہوگا

ham be tumay satany par utar aayn to kya ho ga

tumara dill dukhany par utar ayn to kya ho gaa

hamay badnam karty phirty ho apni mehfil ma

agar ham sach batany par utar ayn to kya ho gaa

○●○●○●○●○●○●○●

کرنے دو جو بکواس کرتے ہیں 

ہمیشہ خالی برتن ہی آواز کرتے ہیں

karny do jo bakwas karty hain

hamasha khalii bartan hi awaz karty hain

 

○●○●○●○●○●○●○●



ہم نے تو پھونک پھونک کر رکھا تھا ہر قدم 

موسم ہی اپنے شہر میں رسوائیوں کا تھا

ham nay to phonk kar rakha tha har qadam

misam he apny sehar ma raswayion ka tha

 

○●○●○●○●○●○●○●

خیر بدنام تو پہلے بھی بہت تھے لیکن

تجھ سے ملنا تھا کہ پر لگ گئے رسوائی کو

khairr badnam to pehlay be bohat thay lakin

tujh say milnay tha kay par lag gay ruswai ko

 

○●○●○●○●○●○●○●

یہ پارسا لوگ مجھ جیسا گنہگار پے 

طنز نہ کریں تو مر جاٸیں

 Ya parsa log mujh hesa ghunaghar pay

tanzz na karain to mar jainn

○●○●○●○●○●○●○●

تمہیں ہم بھی ستانے پر اتر آئے تو کیا ہوگا

تمہارا دل دکھانے پر اتر آئے تو کیا ہوگا

ہمیں بد نام کرتے پھرتے ہو اپنی محفل میں

ہم اگر سچ بتانے پر اتر آئے تو کیا ہوگا

tumay ham satany par utar aayn to kya ho gaa

tumra dill dukhanay par utar aayn to kya ho gaa

hamy badnam karty phirtay ho apni mehfil ma

ham agar sach batany par utar aayn to kya ho gaa

 

○●○●○●○●○●○●○●

تو بدنام کر کے تو دیکھ مجھے محفل میں قسم سے 

مشہور میں شھر میں تجھے بھی نا کر دوں تو کہنا

tu badnam  kar kay to dakh mujh mehfil ma kisam say

See also  Eid poetry in urdu

mushoor ma sehar ma tujhy be na kar don to kehna

 

○●○●○●○●○●○●○●

میں بدنام نہیں کرتا سارے راز چھپا لیتا ہوں 

کوئی پوچھے اس کے بارے ميں ہلکا سا مسکرا دیتا ہوں

ma badnam nahi karta saray razz chupa leta hon

koi pochay is kay baray ma halka sa muskura deta hon

 

○●○●○●○●○●○●○●

یوں الزام تراشیوں سے بہتر تھا 

ہم کتنے برے ہیں ہم سے ہی پوچھ لیتے

Youn ilzam tarashon nay behtar tha

ham kitny buray hain ham say he poch latay

 

○●○●○●○●○●○●○●

ہماری افواہ کا دھواں وہیں سے اٹھتا ہے 

جہاں ہمارے نام سے آگ لگ جاتی ہے

Hamari afwaa ka dhuwa wahi say uthta hay

jahan hanaray nam say aagh lag jati ha

 

○●○●○●○●○●○●○●

لذت غم بڑھا دیجئے آپ پھر مسکرا دیجئے 

میرا دامن بہت صاف ہے کوئی تہمت لگا دیجئے

Lazat gham barha dejeya ap phr muskura dejeya

mari daman bohat saf hay koi tohmat laga dehejeya

 

○●○●○●○●○●○●○●

جس کی کامیابی روکی نہیں جاسکتی 

اس کی بدنامی شروع ہو جاتی ہے

Jis ki kamyabi roku nahi jaa sakti

us ku badnami suro ho jati ha

 

○●○●○●○●○●○●○●

اتنے برے تو نہ تھے ہم جتنے الزام لگائے لوگوں نے 

بس کچھ مقدر برے تھے کچھ آگ لگائی اپنوں نے 

Itnay buray to na thay ham jitna ilzam lagay logo nay

bas kuch muqadar buray thay kuch aagh lagai apno nay

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏غیروں کو کیا پڑی ہے کہ رسوا کریں مجھے

ان سازشوں میں ہاتھ کسی آشنا کا ہے

Ghairon ko kya pari ha k ruswa karain mujhy

is Sazashon ma hath kisi aashana ka hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏محبت کرنے والے بڑے نادان ہوتے ہیں 

حاصل کچھ نہیں ہوتا مگر بدنام ہوتے ہیں

Mohabat karny walay baray nadan hotay hain

hasil kuch nahi hota magar badnam hotay hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

میں نے پھر ویسا ہی بنا لیا خود کو 

جیسا ہونے کا الزام لگایا تھا اس نے

ma nay phir wesa be bana leya khud ko

Jesa honay ka ilzam lagay tha us nay

 

○●○●○●○●○●○●○●

روٹھے ہو تو مجھ پر کوئی تہمت نہ لگانا

کس کس کو بتاوں گا میں ایسا تو نہیں ہوں



Roothay hovay to mujh par koi tohmat na lagana

kis kis ko baton ga ma asa to nahi hon

 

○●○●○●○●○●○●○●

جس نے جیسا سوچ لیا ہم ویسے ہیں باقی میرا رب جانتا ہے ہم کیسے ہیں 

jis nay jesa socha leya

ham wasy hain

baki mera Rab janta ha

Ham kasay hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

کہاں سے لاوں اپنے جیسا بد کردار

یہاں تو سب فرشتے بنے بیٹھے ہیں

kahan say layon apnay jesa bad qardar

yahan to sab farustay bany bathay hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

احسان یہ رہا تہمت لگانے والوں کا مجھ پر 

اٹھتی انگلیوں نے مجھے مشہور کردیا

Ehsan ya raha tuhmat lagany walyon ka mujh par

uthi ungliyn nay mujhy mushoor kar deya

 

○●○●○●○●○●○●○●

کبھی کبھی آپ بنا کچھ غلط کیۓ بھی برے بن جاتے ہیں

کیونکہ جیسا لوگ چاہتے تھے آپ ویسا نہیں کرتے

kabi kabi aap bina kuch galat keyan b buray ban jatay hain

kuy kay

jesa log chahty thay ap wesa nahi karty

 

○●○●○●○●○●○●○●

الزام و تہمت لگانے والے بہت ہیں 

میں بھی مطمئن ہوں کہ خدا سب دیکھ رہا ہے 

ilzam e tohmat lagany waly bohat hain

ma be mutmain hon kay khuda sab dakh raha ha

 

○●○●○●○●○●○●○●

دنیا طعنے دے گی تم کو 

دور رہا کرو 

بگڑے ہوئے لوگ ہیں ہم

duniya tanay day gii tum ko

dour raha karo

bigray hovay log hain ham

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏کوشش بہت کی راز محبت بیاں نہ ہو 

ممکن کہاں ہے آگ لگے اور دھواں نہ ہو

koshish bohat ki raz Mohabat beyan naa ho

mumkin kahan hay aagh lagay or dhuwa na hoo

 

○●○●○●○●○●○●○●

کبهی آ کے تهوڑا وقت میرے ساتھ گزار 

جتنا تو نے سنا ہے اتنا برا نہیں ہوں میں

kabi aa kay thora waqt maray sath guzar

jitna to nay suna ha itna bura nahi hon ma

 

○●○●○●○●○●○●○●

تماشے سب یہاں عشق ہی نہیں کرتا

اس پیٹ نے بھی دی ہیں رسوائیاں بہت

Tamasahy sab yahan ishq he nahi karta

is pait nay b di hain ruswayian bohat

 

○●○●○●○●○●○●○●

See also  Dukhi Poetry in Urdu

بدنام زمانہ ہم پر کچھ بهی الزم لگائے

ہم تو جیتے ہیں آخرت میں کامیاب ہونے کیلئے

badnam zamana ham par kuch be ilzam lagay

ham to jeetay hain aakhrat ma kamyab honay kay leya

 

○●○●○●○●○●○●○●

گمنام زندگی بہتر ہے

نام میں بھی بدنامی ہے

Ghumnam zindagi behtar ha

nam ma be badnami hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

میں زمانے میں بدنام فقط اس لیے ہوں 

مجھے دنیا کی طرح بدل جانا نہیں آتا

Ma zamany ma badnam faqat is keya hon

mujhu duniya ku tarah badal jana nahi aata

 

○●○●○●○●○●○●○●

کھلی کتاب تھی ساری ہی زندگی میری 

پڑھا کسی نے نہیں تبصرے بہت سے ہوئے

khuli katab thi sari he zindagi mari

parha kisi nay nahi tabsaray bohat say hovay

 

○●○●○●○●○●○●○●

اگر لوگ یونہی خامیاں نکالتے رہے مجھ میں 

تو ایک دن صرف خوبیاں رہ جائیں گی

agar log yon hi khamiyan nikalray rahy mujh ma

to ak din surf khubiyan reh jain gii

 

○●○●○●○●○●○●○●

ناکامیوں نے اور بھی سرکش بنا دیا

اتنے ہوئے ذلیل کہ خوددار ہوگئے

Na kamiyon nay or be sar kash bana deya

itnay hovay zaleel kay khud dar ho gay

 

○●○●○●○●○●○●○●

جن کی خاطر شہر بھی چھوڑا جن کے لیے بدنام ہوئے

آج وہی ہم سے بیگانے بیگانے سے رہتے ہیں

jin ki khatir sehar be chora jin kay leya badnam hovay

aj wohi ham say beganay beganay say rehtay hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

سب جرم میری ذات سے منسوب ہیں 

کیا میرے سوا اس شہر میں معصوم ہیں سارے

Sab jurm mari zat say mansoob hain

kya maray sawa is sehar ma  masoom hain saray

 

○●○●○●○●○●○●○●

آوارگی چھوڑ دی تو بھولنے لگی دنیا

بدنام تھے تو اک نام تھا اپنا

Awargii chor di to boonay lagi dunia

badbam thay to ak nam tha apna

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏غیروں کو کیا پڑی ہے کہ رسوا کریں مجھے

ان سازشوں میں ہاتھ کسی آشنا کا ہے

Ghairon ko kya pari hay kay ruswa karain mujhy

in shazason ma hath kisi aasna ka hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

مت پوچھ میرےنام کی پہچان کہاں تک ہے

تو بدنام کر تیری اوقات جہاں تک ہے

mat poch maray nam ki pehchan kahan tak hay

to badnam kar tari okat jahan tak. Hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

منسوب اس کے قصے اوروں سے بھی تھے 

لیکن وہ بات بہت پھیلی جو بات چلی ہم سے



Munsoob us kay kisay oron say be thay

lakin wo bat bohat phali jo bat chali ham say

 

○●○●○●○●○●○●○●

پیار کیا تو بدنام ہو گئے

چرچے ہمارے سر عام ہو گئے

ظالم نے دل بھی اسی وقت توڑا

جب ہم اس کے پیار کے غلام ہو گئے

Pyar keya to badnam ho gay

charcha hamara sar aam ho gaya

zalim nay dill be isi waqt tora

jab ham is kay pyar kay ghulam ho gay

 

○●○●○●○●○●○●○●

ہر شخص کی جوانی پر الزام ہوتا ہے 

لاکھ نظریں پاک ہو جوان بدنام ہوتا ہے

Har sakhs ki jawani par ilzam hota hay

lakh nazrain pak ho jawan badnam hota hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

اگر لوگ یونہی خامیاں نکالتے رہے مجھ میں 

تو ایک دن صرف خوبیاں رہ جائیں گی

agar log youn hi khamiyan nikaltay rahy mujh ma

to ak din sirf khobiyan reh jain gii

 

○●○●○●○●○●○●○●

ناکامیوں نے اور بھی سرکش بنا دیا

اتنے ہوئے ذلیل کہ خوددار ہوگئے

Nakamiyon nay or be sarkash bana deya

itna hovay zalil kay khud dar ho gay

 

○●○●○●○●○●○●○●

جن کی خاطر شہر بھی چھوڑا جن کے لیے بدنام ہوئے

آج وہی ہم سے بیگانے بیگانے سے رہتے ہیں

jin ki khatir sehar be chora jin kay leya badnam hovay

aj wohi ham say begany beganay say rehtay hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

سب جرم میری ذات سے منسوب ہیں 

کیا میرے سوا اس شہر میں معصوم ہیں سارے

Sab juram mari zaat say munsoob hain

kya maray sawa is sehar ma masoom hain saray

 

○●○●○●○●○●○●○●

آوارگی چھوڑ دی تو بھولنے لگی دنیا

بدنام تھے تو اک نام تھا اپنا

Awargii chor di to bolnay lagi duniya

badnam thay to ak nam tha apna

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏غیروں کو کیا پڑی ہے کہ رسوا کریں مجھے

ان سازشوں میں ہاتھ کسی آشنا کا ہے

See also  Beautiful shayri in urdu

ghairon ko kya pari hay kay ruswa karain mujhy

in Shazon ma hath kisi asnaa ka hay

○●○●○●○●○●○●○●

مت پوچھ میرےنام کی پہچان کہاں تک ہے

تو بدنام کر تیری اوقات جہاں تک ہے

Mat poch maray nam ki pehchan kahan tak hay

to badnam kar tari okat jahan tak hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

منسوب اس کے قصے اوروں سے بھی تھے 

لیکن وہ بات بہت پھیلی جو بات چلی ہم سے

Munsoob is kay qusay oron say be thay

lakin wo bat bohat phelu jo bat chali ham say

 

○●○●○●○●○●○●○●

پیار کیا تو بدنام ہو گئے

چرچے ہمارے سر عام ہو گئے

ظالم نے دل بھی اسی وقت توڑا

جب ہم اس کے پیار کے غلام ہو گئے

Pyar keya to badnam ho gay

charcha hamara sar aam ho gaya

zalim nay dill be isi waqt tora

jab ham is kay pyar kay ghulam ho gay

 

○●○●○●○●○●○●○●

ہر شخص کی جوانی پر الزام ہوتا ہے 

لاکھ نظریں پاک ہو جوان بدنام ہوتا ہے

Har sakhs ki jawani par ilzam hota hay

lakh nazrain pak ho jawan badnam hota hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏خود سے ملنے کی بھی فرصت نہیں مجھے

اور وہ اوروں سے ملنے کا الزام لگا رہے ہیں

khud say milnay ki be fursat nahii mujhy

or wo oron say milnay ka ilzam laga rahy hain

○●○●○●○●○●○●○●

ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺗﻨﯽ ﺧﺎﻣﯿﺎﮞ ﻧﮑﺎﻟﯽ ﮨﯿﮟ

ﮐﮧ ﺍﺏ مجھ ﻣﯿﮟ ﻓﻘﻂ ﺧﻮﺑﯿﺎﮞ ﮨﯽ ﺑﺎﻗﯽ ﮨﯿﮟ

logo nay itnii khamiyanbnikali hain

kay ab kujh ma faqt khamiyan he baki hain

 

○●○●○●○●○●○●○●

اچھا کرتے ہیں وہ لوگ جو اظہار نہیں کرتے

مر تو جاتے ہیں پر کسی کو بدنام نہیں کرتے

acha karty hain wo log jo izhar nahi karty

mar to jatay hain par  kisi ko badnam nahi karty

 

○●○●○●○●○●○●○●

غیروں سے کہا تم نے غیروں سے سنا تم نے

کچھ ہم سے کہا ہوتا کچھ ہم سے سنا ہوتا.

Ghairon say kaha tum nay ghairon say suna tum nah

kuch ham say kaha hota kuch ham say suna hota

 

○●○●○●○●○●○●○●

‏ﮨﻢ ﻧﮯ ﭘﮍﮬﯽ ﮨﯿﮟ ﺻﺎﻑ ﺻﺎﻑ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺳﻨﯽ ﮨﯿﮟ ﻏﻮﺭ ﺳﮯ



ﻧﻈﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺟﻮ ﺍﭨﮭﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﻮ ﮨﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ

Ham nay parhi hain saaf ham nah suni hain ghor say

narzain kay jo uthain nahi batain kay jo hoie nahii

 

○●○●○●○●○●○●○●

اگر دنیا میں رہنا ہے تو راز کسی کو مت دینا

یہ دنیا اک نقارہ ہے تجھے بدنام کر دے گی

Agar duniya ma rehna hay tobrazz kisi ko mat dena

ya duniya ak nakara hay tujhy badnam kar day gii

 

○●○●○●○●○●○●○●

میں وہ بدنام محبت ہوں جدھر جاوں زمانے میں

نگاہیں خلق کی اٹھتی ہیں مجھ پر انگلیاں بن کر

ma badnam Mohabat hon jidgar joy zamanay ma

nighain khalaq ki uthii hain mujh par ungliyn ban kar

 

○●○●○●○●○●○●○●

کوئی تو ہو جو مجھے سرعام برا کہے 

میں بھی دیکھوں حمایت کون کون کرتا ہے.

 

Koi to hoo jo mujhay sar aam bura kahay

ma be dakhaon hamayat kon kon karta hay

 

○●○●○●○●○●○●○●

ہمارے کردار کے داغوں پہ طنز کرتے ہو 

ہمارے پاس بھی آئينہ ہے دکھائيں کیا؟

Hamaray kardar kay daghon pay tanz karty ho

hamaray pass be aina hay dekhainn  kya ?

 

○●○●○●○●○●○●○●

مجھے بدنام کرنے کے بہانے ڈھونڈتے ہو کیوں 

میں خود ہو جاؤ گا بدنام پہلے نام ہونے دو

mujhy badnam karny kay bahanay dhondtay ho kuy

ma khud ho joy gaa badnam pehlay nam hony doo

 

○●○●○●○●○●○●○●

تم اپنی اچھائی میں مشہور رہو

ہم برے ہیں ہم سے دور رہو

tum apni achai ma mashoor rahoo

ham buray hain ham say dour raho

 

○●○●○●○●○●○●○●

یوں سرعام مجھے ملنے بلایا نہ کرو



لوگ کر دیتے ہیں بدنام زمانے بھر کے

youn sar aam mujhy milnay bulaya na karo

log kar datay hain badnam zamany bharr kay

○●○●○●○●○●○●○●

دیکھ میں ہو گیا بدنام کتابوں کی طرح

میری تشہیر نہ کر اب تو جلا دے مجھ کو

dakh ma hovgaya badnam kitabon ki tarah

mari tashbeer na kar ab to jala day mujh ko

 

○●○●○●○●○●○●○●