Connect with us

Urdu Shayari

Judai Poetry in Urdu

اتنی جلدی وہ بچھڑ جائے گا سوچا بھی نہ تھا
میں نے جی بھر کے ابھی تو اسے دیکھا بھی نہ تھا

Itni jaldi wo bichar jaye ga socha bhi. Na tha 

Maine jee bhar ke abi to use daikha bhi na tha

○●○●○●○●○●○●○●

بہت مضبوط تھے کبھی جو
اب ٹوٹ گئے ہیں تیری جدائی کے بعد

Bht mazboot the kabi jo

Ab toot gye hain teri judai k baad

○●○●○●○●○●○●○●

جاتے ہوئے اسے جی بھر کے دیکھ تو لوں میں
اے آنکھ ٹھہر تجھے رونے کی پڑی ہے

Jaate hue use jee bhar ke daikh to lu main

Ae ankh thehar ja tuje rone ki pari hai

○●○●○●○●○●○●○●

کون کہتا ہے کہ درد کا احساس اپنوں کو ہوتا ہے

جب درد ہی اپنے دیں تو احساس کیسا

Kon kehta hai dard ka ehsas apnoo ko hota h

Jab dard e apne dain To ehsas kesa

○●○●○●○●○●○●○●

پڑھ کر جس پر تم نے واہ واہ کہہ دیا صاحب وہ میرا درد تھا
Parh kar jis par tumne wah wah keh dia sahib wo mera dard tha 

○●○●○●○●○●○●○●

درد جب شاعری میں ڈھلتے ہیں
دل میں ہر سو چراغ جلتے ہیں
کوئی شے ایک سی نہیں رہتی
عمر ڈھلتی ہے غم بدلتے ہیں

Dard jab shayari main dhalte hain
Dil main Har su chiraag jalte hai

Koi shae aik c nahi rehti

Umar dhalti hai gam badalte hain 

○●○●○●○●○●○●○●

جن سے خفا تک نہ ہوتے تھے
ان سے جدا ہو گے ہم

Jin se khafa tak na hote the

Unse juda hoogye hm

○●○●○●○●○●○●○●

ہوا جب زرد پتوں کو جدا شاخوں سے کرتی ہے
ہمیں تم سے بچھڑ جانا بہت یاد آتا ہے

hawa jab zard patoo  ko juda shakhoon se karti hai

hmain tum se bichar jana bht yaad aata hai

○●○●○●○●○●○●○●

نومبر کی طرح
ہم بھی الوداع کہہ دیں گے
ایک دن پھر ڈھونڈتے پھرو گے
دسمبر کی ٹھنڈی راتوں 

November ki  tarha

Hm b alvida keh dain ge

Ik din phr dhundte phiro ge 

December ki thandi ratoon main

○●○●○●○●○●○●○●

میں تیرے وصل میں بھی رویا ہوں
ہجر کا رونا تو سبھی روتے ہیں

Main tere wassal main b roya hu

hijar ka rona to sab hi rote hain

○●○●○●○●○●○●○●

وہ جو ڈرتے تھے جدائی سے
انہوں نے پہل کی بچھڑنے میں

Wo jo darte the judai se

Inhoo ne pehal ki bicharnay main

○●○●○●○●○●○●○●

تیرا چہرا ان آنکھوں میں پرانا ہوگیا
کہیں پھر مل تجھے دیکھے ہووے زمانہ ہوگیا

Tera chehra in ankhon main purana hoogya

Kahin phir mil tuje daikhe hue zamana hoogya

○●○●○●○●○●○●○●

بہت دنوں میں کہیں ہجر ماہ و سال کے بعد
رکا ہوا ہے زمانہ ترے وصال کے بعد

Bht dinoo main kahin hijar mah o saal ke baad

Ruka hua hai zamana tere wasal k baad

○●○●○●○●○●○●○●

جدا اپنوں سے ہو کر ٹوٹ جاتا ہے کوئی کیسے
جو بچھڑو گے کبھی مجھ سے تو خود ہی جان جاو گے

Juda apnoo se hoke toot jata hai koi aise

Jo bichroo ge kabi mujh se to khud e jaan jaao ge

○●○●○●○●○●○●○●

تحریر میں آجائے اگر لفظ جدائی
محسوس یوں ہوتا ہے قلم ٹوٹ رہا ہے

Tehreer main aajaye agr lafz judai 

Mehsoos yun hota hai qalam toot raha hai

○●○●○●○●○●○●○●

جانے والوں کو روکا نہیں کرتے دوست
بلکہ وآپس آنے کے لیے دعا کیا کرتے

Jane waalon ko roka nai karte dost

Balke wapis and  k liyee dua karte hain 

○●○●○●○●○●○●○●

جی بھر کے اسے جاتے ہوئے دیکھنے تو دے
اے آنکھ ٹھر جا تجھے رونے کی پڑی ہے

Jee bhar ke ise jaate hue daikhne to de

Ae ankh thehar jaa tujhe rone ki pari hai

○●○●○●○●○●○●○●

رگوں میں خون کے جمنے سے مر گیا ورنہ 

تیری جدائی کا صدمہ تو سہہ گیا تھا میں

Ragon ma khoon kay jamnay say mar gaya waran

tari judai ka sadma to sehh gaya tha ma

See also  dil Poetry in Urdu

○●○●○●○●○●○●○●

مجھے بے جان سا کر گیا 

صدمہ تیرے بچھڑ جانے کا 

mujhay bay jan sa kar gaya

sarmay taray buchar janay ka

○●○●○●○●○●○●○●

ہم سے کچھ لوگ یوں بچھڑ گئے 

جیسے گرتے ہیں آسمان سے تارے




Ham say kuch log yuon bichar gay

jasay girtay hain asman say taray

○●○●○●○●○●○●○●

تیرے ہونے سے سمجھتا تھا کہ دنیا تم ہو

ویسے دنیا کو میں بیکار کہا کرتا تھا

تم سے بچھڑا ہوں تو رویا ہوں وگرنہ کل تک

رونے والوں کو میں فنکار کہا کرتا تھا

Taray honay say samjhta tha kay duniya tum ho

wasay duniya ko ma bekar kaha karta tha

tum say bichara hon to roya hon warna kal tak

ronay walaon ko ma fankar kaha karta tha

○●○●○●○●○●○●○●

تیری خوشی تھی اسی فیصلے میں تو چپ تھا 

کہاں گوارہ تھا ورنہ تیرا جدا ہونا

tarai khoshi thi usi fasilay ma to chup tha

kahan gawara tha warna tera juda hona

○●○●○●○●○●○●○●

تیرے پاس رہنے کا سوچا تھا

تیرے شہر میں بھی نا رہ سکا

yatay pass rehna ka socha tha

taray sehar ma be naa reh saka

○●○●○●○●○●○●○●

مر جانے سے صبر آجاتا ہے 

کسی کے بچھڑ جانے سے نہیں

Mar janay say sabar aa jata ha

kidi kay bichar janay say nahi

○●○●○●○●○●○●○●

کسی دن ہم بھی ڈوب جائیں گے اس ڈھلتے سورج کی طرح 

پھر اکثر تجھے رلاۓ گا یہ شام کا منظر

kisi din ham be doob jain gay us dhaktay suraj ki tarah

phir aksar tujhay rulay gaa ya shaam ka munzar

○●○●○●○●○●○●○●

‏وہ منتظر نگاہیں وہی شام غم کا عالم 

ہم ازل سے دیکھ رہے ہیں تیری وآپسی کی راہیں

wo muntazir nigahain wohi sham gham ka aalam

ham azal say dakh rahy hain tari wapsi ki rahain

○●○●○●○●○●○●○●

تم سے دوری تو بہرحال قیامت تھی مگر؟ 

تم سے مل کر بھی نا چین آئے یہ قصہ کیا ہے

tum say durii to barahal kayamat thi magar

tum say mil kar be naa chain aya ya qisa kya hay

○●○●○●○●○●○●○●

سپرد خاک مرا ایک ایک خط نہ کرے

وہ بدگمانیوں میں فیصلے غلط نہ کرے

سلجھ بھی سکتا ہے جھگڑا اسے کہو کہ ابھی

جدائی کے کسی کاغذ پہ دستخط نہ کرے

Sapurd khak mera ak ak khat na karay

wo badgumaniyon ma fasila galat naa karay

sulj be sakta ha jhagravusyvkaho kay abi

judai kay kisi kaghaz pay dastak na karay

○●○●○●○●○●○●○●

نظر چرا کے کہا بس یہی مقدر تھا

بچھڑنے والے نے ملبہ خدا پہ ڈال دیا

Nazar chura kay kaha bass yahi muqadar tha

bichranay walay nay malba khuda pay dal deya

○●○●○●○●○●○●○●

جانے والے کبھی لوٹا نہیں کرتے

اپنی آنکھوں کو دہلیز کا نگران نہ بنا

janay walay kabi lota nahi karty

apni ankhon ko dehleez ka nigran naa bana

○●○●○●○●○●○●○●

تم سے بات نہ کرنے پر بخار ہو جاتا تھا 

تو سوچو بچھڑنے پر کیا حال ہوا ہو گا

tum say bat na karny par bukhar ho jata hay

to socha bichrany par kya hal hova ho gaa

○●○●○●○●○●○●○●

اسے پتہ ہی کہاں ہے جدائی کی وحشت

اسے تو چھوڑ کر کبھی کوئی گیا نہیں

usy pata he Kahan hay judai ki wehsatt

usy to chor kar be kabi koi  gaya nahi

○●○●○●○●○●○●○●

 جانے کس سمت سے آ جائے وہ آنے والا

ہم نے ہر سمت سے دیوار گرا رکھی ہے

janay kis simat say aa jay wo anay wala

ham nay har simat say dewar gura rakhi hay

○●○●○●○●○●○●○●

کچھ اس وجہ سے نہیں سوتے رات بھر




اگر وہ خواب میں بھی بچھڑ گیا 

تو مرجائیں گے ہم

kuch is waja say nahi sotay rat bharr

agar wo khawab ma b bichar gaya

to marr jain gay ham

○●○●○●○●○●○●○●

میں کس طرح گزاروں گا عمر بھر کا فراق

See also  To shayar hai main tari shayari




وہ ایک پل بھی جدا ہو تو جان جاتی ہے

ma kis tarah guzaron ga umarbhar kab farak

wo ak pal be juda hova to jan jati hay

○●○●○●○●○●○●○●

تھا تو نہ ممکن پر 

وقت نے سکھا دیا تیرے بنا جینا 

tha to na mumkin par

waqt nay sekha deya taray bina jeena

○●○●○●○●○●○●○●

نکلتی ہے جیسے روح گنہگاروں کی




جناب

ویسے بچھڑ رہے ہو تم مجھ سے

nikalti hay jasy rooh gunagharon kii

jaban

wasy bichar rahay ho tum mujh say

○●○●○●○●○●○●○●

سپرد خاک مرا ایک ایک خط نہ کرے




وہ بدگمانیوں میں فیصلے غلط نہ کرے

سلجھ بھی سکتا ہے جھگڑا اسے کہو کہ ابھی

جدائی کے کسی کاغذ پہ دستخط نہ کرے

 

Sapurd khak mera ak ak khat na karay

wo badgumaniyon ma fasila galat naa karay

sulj be sakta ha jhagravusyvkaho kay abi

judai kay kisi kaghaz pay dastak na karay

○●○●○●○●○●○●○●

نظر چرا کے کہا بس یہی مقدر تھا

بچھڑنے والے نے ملبہ خدا پہ ڈال دیا

Nazar chura kar kaha bas yahi kuqadar tha

bichrany walay nay malba Khuda pay dal deya

○●○●○●○●○●○●○●

جانے والے کبھی لوٹا نہیں کرتے

اپنی آنکھوں کو دہلیز کا نگران نہ بنا

janay walay kabi lota nahi karty

apni ankhon ko dehleez ka nigran naa bana

○●○●○●○●○●○●○●

تم سے بات نہ کرنے پر بخار ہو جاتا تھا 

تو سوچو بچھڑنے پر کیا حال ہوا ہو گا

tum say bat na karny par bukhar ho jata hay

to socha bichrany par kya hal hova ho gaa

○●○●○●○●○●○●○●

اسے پتہ ہی کہاں ہے جدائی کی وحشت

اسے تو چھوڑ کر کبھی کوئی گیا نہیں

usy pata he Kahan hay judai ki wehsatt

usy to chor kar be kabi koi  gaya nahi

○●○●○●○●○●○●○●

 جانے کس سمت سے آ جائے وہ آنے والا

ہم نے ہر سمت سے دیوار گرا رکھی ہے

janay kis simat say aa jay wo anay wala

ham nay har simat say dewar gura rakhi hay

○●○●○●○●○●○●○●

کچھ اس وجہ سے نہیں سوتے رات بھر

اگر وہ خواب میں بھی بچھڑ گیا 

تو مرجائیں گے ہم

 

kuch is waja say nahi sotay rat bharr

agar wo khawab ma b bichar gaya

to marr jain gay ham

○●○●○●○●○●○●○●

میں کس طرح گزاروں گا عمر بھر کا فراق

وہ ایک پل بھی جدا ہو تو جان جاتی ہے

 

ma kis tarah guzaron ga umarbhar kab farak

wo ak pal be juda hova to jan jati hay

○●○●○●○●○●○●○●

تھا تو نہ ممکن پر 

وقت نے سکھا دیا تیرے بنا جینا 

Tha to na mumkin par

waqt nay seekha deya taray bina jeena

○●○●○●○●○●○●○●

نکلتی ہے جیسے روح گنہگاروں کی

جناب

ویسے بچھڑ رہے ہو تم مجھ سے

 

nikalti hay jasy rooh gunagharon kii

jaban

wasy bichar rahay ho tum mujh say

○●○●○●○●○●○●○●

‏ہم اس کی آس میں یوں بیٹھے ہیں 

جیسے لاعلاج کو انتظار ہو موت کا

Ham us kii ass ma youn bathay hain

jasay laelaj ko intezar ho moat ka

○●○●○●○●○●○●○●

دور رہ کر بھی جو سمایا ہے میری روح میں 

پاس والوں پر وہ شخص کتنا اثر رکھتا ہو گا 

door reh kar be jo samaya hay mari rooh ma

pass walon par wo sakhs kitna asar rakhta hoo gaa

○●○●○●○●○●○●○●

کوئی مر جائے تو صبر آجاتا ہے 

بچھڑ جائے تو کیوں نہیں آتا؟

koi mar jay to sabar aaa jata hay

bechar jay to kuy nahi aata

○●○●○●○●○●○●○●

بچھڑ کر تجھ سے کسی اور پہ مرنا ہو گا 

ہائے افسوس ہمیں یہ تجربہ بھی کرنا ہو گا

bichar kar tujh say kisi or pay marna ho gaa

hayy Afsos

hamay ya tajzeya be karna hoo gaa

○●○●○●○●○●○●○●

مر جائیں وہ مجبوریاں 

جن کی وجہ سے آپ مجھ سے دور ہیں

See also  Bewafa poetry in urdu

mar jain wo mojboriyan

ji ki waja say app mujh say door hain

○●○●○●○●○●○●○●

کتنی مختصر ہے میری محبت کی داستان 

وہ ملا بھی نہیں اور بچھڑ بھی گیا

kitnii mukhtasir hay mari Mohabat ki dastan

wo mila be nahi or bichar be gaya

○●○●○●○●○●○●○●

تمہیں سہنا پڑے گا درد جدائی کا

میرا کیا میں تو مر جاونگا

tumay sehna paray gaa dard judai ka

mera kya ma to marr joy gaa

○●○●○●○●○●○●○●

رنج کیا تیرے بچھڑنے پہ تو حیرت بھی نہیں

میں نے امکان سبھی پیشِ نظر رکھے تھے

Rang kya taray bicharany pay tu herat be nahi

ma nay emkan sabii paish nazar rakahy thay

○●○●○●○●○●○●○●

شفا دیتا تھا کبھی جس کا مرہمی لہجہ 

وہ مسیحا مجھے بیمار کر کے چھوڑ گیا

shifaa deta tha kabi jis ka marham lehjaa

wo maseha mujhay bemar kar kay chor gaya

○●○●○●○●○●○●○●

میں تیرے ملنے کو معجزہ کہہ رہا تھا لیکن

تیرے بچھڑنے کا سانحہ بھی کمال گزرا

Ma taray milnay ka mujzaa keh raha tha

lakin

taray bicharnay ka sankaa be kamal guzra

○●○●○●○●○●○●○●

‏ہم اس کی آس میں یوں بیٹھے ہیں 

جیسے لاعلاج کو انتظار ہو موت کا

Ham us ki aass ma youn bathay hain

jasy laelaj ko intezar ho moat ka

○●○●○●○●○●○●○●

دور رہ کر بھی جو سمایا ہے میری روح میں 

پاس والوں پر وہ شخص کتنا اثر رکھتا ہو گا 

dour reh kar b samaya hay mari rooh ma

pass walaon par wo sakhs kitna asar rakhta ho gaa

○●○●○●○●○●○●○●

کوئی مر جائے تو صبر آجاتا ہے 

بچھڑ جائے تو کیوں نہیں آتا؟

Koi mar jay to sabar aa jata hay

bichar jay to kuy nahi aata?

○●○●○●○●○●○●○●

بچھڑ کر تجھ سے کسی اور پہ مرنا ہو گا 

ہائے افسوس ہمیں یہ تجربہ بھی کرنا ہو گا

bichar kar tujh say kisi ir pay marna ho gaa

hay Afsos

hamay ya tajeeza be karna ho gaa

○●○●○●○●○●○●○●

مر جائیں وہ مجبوریاں 

جن کی وجہ سے آپ مجھ سے دور ہیں

mar jain wo mojboriyn

jin ki waja say aap mujhy say dour hain

○●○●○●○●○●○●○●

کتنی مختصر ہے میری محبت کی داستان 

وہ ملا بھی نہیں اور بچھڑ بھی گیا

kitni mukhtasir hay mari Mohabat ki dastan

wo mila be nahi or bichar be gaya

○●○●○●○●○●○●○●

تمہیں سہنا پڑے گا درد جدائی کا

میرا کیا میں تو مر جاونگا

tumay sehna paray ga dard judai ka

mera kya ma to mar jongaa

○●○●○●○●○●○●○●

رنج کیا تیرے بچھڑنے پہ تو حیرت بھی نہیں

میں نے امکان سبھی پیشِ نظر رکھے تھے

ranjj kya tera bichrany pay to herat be nahi

ma nay imkan sabi paish nazar rakhy thay

○●○●○●○●○●○●○●

شفا دیتا تھا کبھی جس کا مرہمی لہجہ 

وہ مسیحا مجھے بیمار کر کے چھوڑ گیا

shifa deta tha kabi jis ka marham lehja

wo maseeha mujhay bemar kar kay chor gaya

○●○●○●○●○●○●○●

میں تیرے ملنے کو معجزہ کہہ رہا تھا لیکن

تیرے بچھڑنے کا سانحہ بھی کمال گزرا

 

Ma taray milnay ka mujzaa keh raha tha

lakin

taray bicharnay ka sankaa be kamal guzra

○●○●○●○●○●○●○●

میں تیرے ملنے کو معجزہ کہہ رہا تھا لیکن

تیرے بچھڑنے کا سانحہ بھی کمال گزرا

Ma taray milnay ka mujzaa keh raha tha

lakin

taray bicharnay ka sankaa be kamal guzra

○●○●○●○●○●○●○●

ہمارا حق تو نہیں پر ہم پھر بھی تم سے یہ کہتے ہیں 

ارے زندگی لے لو پر ہم سے دور نہ جاؤ

hamara haq to nahi par ham phir be tum say ya jehtay hain

Aay Zindagi

lay loo par ham say dour naa joy

○●○●○●○●○●○●○●

رگوں میں خون کے جمنے سے مر جاؤں گا ورنہ 

تیری جدائی کا صدمہ تو سہہ گیا تھا میں

 

Ragon ma khoon kay jamnay say mar gaya waran

tari judai ka sadma to sehh gaya tha ma

○●○●○●○●○●○●○●

Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.