Zukhm Poetry in Urdu

میرے زخموں کا الزام ان پر کبھی لگایا ہی نہیں

قصور تو اپنا تھا جو بن بتائے ہی انہیں اپنا مان بیٹھے 

Meray zakhmo ka ilzam in pay kabhi lagaya hi nae

Qasoor to apna tha bin bataya hu inhyin apan maan bethay

○●○●○●○●○●○●○●

میں نے چاہا تھا زخم بھر جائیں

زخم ہی زخم بھر گئے مجھ میں

Ma nay chaha tha zakahm. Bhar jayin

Zakaham hi zakaham bhar gaya muj ma

○●○●○●○●○●○●○●

ہم تو ہنستے ہیں دوسروں کو ہنسانے کی خاطر 

ورنہ دل پہ زخم اتنے ہیں کہ رویا بھی نہیں جاتا

Hum to hunsaty hn dosron ko hunsanay ki khatir

Warna dill pay zakahm itnay hn kay roya bhi nae jata

○●○●○●○●○●○●○●

کتنے زخم دل میں چھپا لیتا ہوں 

چوٹ کھا کر بھی مسکرا لیتا ہوں

Kitny zakahm dill ma chopa leta hon

Choat kha kar bhi muskara lata hon

○●○●○●○●○●○●○●

زخم بھر جاتے مگر اُف يہ کھرچنے والے

روز آجاتے ہيں دکھلائيے اب کيسے ہيں؟

Zkaham bhar jatay mager ufff ya khurchnay walay

Roaz a jatay hn dheaklayia ab kesay hn

○●○●○●○●○●○●○●

کتنے زخموں کو دل میں چھپانا پڑتا ہے 

چوٹ کھا کر بھی مسکرانا پڑتا ہے 

Kitny zakahm dill ma chopa leta hon

Choat kha kar bhi muskara lata hon

●○●○●○●○●○●○●

میں نے نمک بھی چڑک کر دیکھا زخموں پہ 

اتنی تکلیف نہیں ہوتی جتنی تیری بے رخی دیتی ہے

Ma nay namak bhi chirak kar dekha zakahmon pay

Itni taqleef nae hoti jitni tari bay rukhi deti ha

○●○●○●○●○●○●○●

‏جو زخم زبان سے لگتا ہے اس کو دنیا کا کوئی مرہم ٹھیک نہیں کر سکتا

Jo Zakahm zuban say lagta ha is ko dunia ka koi marhum theek nae kar skta

○●○●○●○●○●○●○●

پھر یوں ہوا زخم نے جاگیر بنا لی 

پھر یوں ہوا کہ درد مجھے راس آگیا

Phir yoon hoa zakham nay jageer bana li

Phir yoon hoa kay dard muja rass agaya

○●○●○●○●○●○●○●

کسی کے عیب کو تو بے نقاب نا کر

خدا حساب کریگا تو خود حساب نا کر

بری نظر سے نا دیکھ مُجھے دیکھنے والے

میں لاکھ بُرا سہی   تُو اپنی نظر خراب نا کر

Kidi kay aib ko to nay bay niqab na kar

Khudha hisab karay ga to khood hisab na kar

Buri nazar say na deakh muja dekahany walay

Ma lakh bura sahi to apni nazar kharb na kar

○●○●○●○●○●○●○●

وہ بھی گنتا نہیں زخم دیتے ہوئے

میں بھی ذرا کمزور ہوں ریاضی میں

Wo b ginta nae zakahm detay hoya

Ma bhi zara kamzore hon reyazee ma

○●○●○●○●○●○●○●

‏وہ رفوگر بھی کہاں تک کرے محنت مجھ پر 

زخم اک سلتا نہیں دوسرا لگ جاتا ہے

Wo rafoo gaar b kahanntak karay mahnat muj par

Zakahm ik sulta nae dosra lag jata ha

○●○●○●○●○●○●○●

زخم دینے والے بھی اپنے

اور مرہم لگانے ولے بھی اپنے

Zakaham denay walay b apnay or marhum lagany waly bhi

○●○●○●○●○●○●○●

زخم دیتے ہو کہتے ہو سہتے رہو 

جان لے کر کہو گے کہ جیتے رہو




Zakahm dety ho khaty ho shatay raho

Jaan lay kar kaho gay kay jeetay raho

○●○●○●○●○●○●○●

‏بقایا زخم اضافی دئیے گئے مجھ کو 

مرے لیے تو ترا انتظار کافی تھا

Baqaya zakham azafi dia gaya muj ko

Mery liya to tara intizar kafi tha

○●○●○●○●○●○●○●

ہم اب کسی اور کے ہو جائیں تو اس میں حیرت کیسی 

تم نے جو زخم دیے ہیں انہیں بھرنا بھی تو ہے نا 

See also  Zindagi poetry in urdu

Hum ab kisi or kay ho jayin to is ma herat kesi

Tum ny jo zakahm diya hn inhyain bharna bhi to ha na

○●○●○●○●○●○●○●

جسم پہ لگے زخم کو کوئی بھی بھر دے گا 

مگر اس دل کے زخموں کو تیرے سوا کوئی نہ بھرے گا

Jisam par lagay zkaham ko koi bhi bhar day ga

Mager is dill kay zakhamo ko teray siwa koi na bhary ga

○●○●○●○●○●○●○●

اکثر جن کی ہنسی خوبصورت ہوتی ہے 

ان کے زخم کافی گہرے ہوتے ہیں

Aksar jin ki hunsi khubsurt hoti ha

In kay zakham kafi ghary hoty hn

○●○●○●○●○●○●○●

کچھ زخم کبھی نہیں بھرتے بس انسان وقت کے 

ساتھ ان کو چھپانے کا سلیقہ سیکھ جاتا ہے

Kuch zakahm kbahi nae bharaty bus insan waqat kay

Shat in ko chopanay ka saleeka seekh jata ha

○●○●○●○●○●○●○●

خود پر خود ترس کھاتے ہیں 

اب زخم بھی ملے تو مسکراتے ہیں

Khud par khud taras kahaty hn

Ab zakham bhi milay to muskraty hn

○●○●○●○●○●○●○●

وہ بھی گنتا نہیں زخم دیتے ہوئے

میں بھی ذرا کمزور ہوں ریاضی میں

Wo b ginta nae zakahm detay hoya

Ma bhi zara kamzore hon reyazee ma

●○●○●○●○●○●○●

‏وہ رفوگر بھی کہاں تک کرے محنت مجھ پر 

زخم اک سلتا نہیں دوسرا لگ جاتا ہے

Wo rafoo gaar b kahanntak karay mahnat muj par

Zakahm ik sulta nae dosra lag jata ha

●○●○●○●○●○●○●

زخم دینے والے بھی اپنے

اور مرہم لگانے ولے بھی اپنے

Zakaham denay walay b apnay or marhum lagany waly bhi apny

●○●○●○●○●○●○●

زخم دیتے ہو کہتے ہو سہتے رہو 

جان لے کر کہو گے کہ جیتے رہو

Zakahm dety ho khaty ho shatay raho

Jaan lay kar kaho gay kay jeetay raho

●○●○●○●○●○●○●

‏بقایا زخم اضافی دئیے گئے مجھ کو 

مرے لیے تو ترا انتظار کافی تھا

Baqaya zakham azafi dia gaya muj ko

Mery liya to tara intizar kafi tha

●○●○●○●○●○●○●

ہم اب کسی اور کے ہو جائیں تو اس میں حیرت کیسی 

تم نے جو زخم دیے ہیں انہیں بھرنا بھی تو ہے نا 

Hum ab kisi or kay ho jayin to is ma herat kesi

Tum ny jo zakahm diya hn inhyain bharna bhi to ha na

●○●○●○●○●○●○●

جسم پہ لگے زخم کو کوئی بھی بھر دے گا 

مگر اس دل کے زخموں کو تیرے سوا کوئی نہ بھرے گا

Jisam par lagay zkaham ko koi bhi bhar day ga

Mager is dill kay zakhamo ko teray siwa koi na bhary ga

●○●○●○●○●○●○●

اکثر جن کی ہنسی خوبصورت ہوتی ہے 

ان کے زخم کافی گہرے ہوتے ہیں

Aksar jin ki hunsi khubsurt hoti ha

In kay zakham kafi ghary hoty hn

●○●○●○●○●○●○●

کچھ زخم کبھی نہیں بھرتے بس انسان وقت کے 

ساتھ ان کو چھپانے کا سلیقہ سیکھ جاتا ہے

Kuch zakahm kbahi nae bharaty bus insan waqat kay

Shat in ko chopanay ka saleeka seekh jata ha

●○●○●○●○●○●○●

خود پر خود ترس کھاتے ہیں 

اب زخم بھی ملے تو مسکراتے ہیں

Khud par khud taras kahaty hn

Ab zakham bhi milay to muskraty hn

●○●○●○●○●○●○●

زخم دے کر وہ مجھ سے پوچھتے ہیں 

تیرے لہجے میں تلخیاں کیوں ہیں

Zakham day kar wo muj say pochaty hn

Taray lhajy ma talkhiyan kun han

○●○●○●○●○●○●○●

تجھ سے تو اچھے زخم ہیں میرے 

اتنی ہی تکلیف دیتے ہیں 

See also  Sharo shayri love in urdu

جتنی برداشت کر سکوں 

Tuj say acahy to zakahm han meray

Itni hi taqleef detay hn

Jitni bardasht kar sakon

○●○●○●○●○●○●○●

زخم کھا کھا کے ہوا یہ بھی تجربہ ہم کو 

حد سے بڑھ جائے تو پھر درد سکون دیتا ہے 

Zakham kha kha kay hoa ya bhi tajurbah hum ko

Had say bhar jaya to phir dard sakoon deta h

○●○●○●○●○●○●○●

زخم مجھے خنجر نہ دے سکا ٹوٹ کر زمین پہ گر گیا

تیری زباں نے مجھے وہ زخم دیا آنکھ سے نکلا آنسو دامن پہ گر گیا

Zakham muja khanjer na day saka toot kar zameen pay gir gaya

Tari zuban nay muja wo zakham dia ankh say nikla anso daman pay gir gaya

○●○●○●○●○●○●○●

پاس آکے سبھی دور چلے جاتے ہیں 

ہم اکیلے تھے اکیلے رہ جائیں گے 

دل کا درد کسے دیکھائیں 

مرہم لگانے والے ہی زخم دے جاتے ہیں

Paas akar sabhi door chalay jaty hn

Hum akelay thy akelay rah jayin gay

Dill ka dard kesay dekhayin

Marhum lagnay walay hi zakaham day jatay hn

○●○●○●○●○●○●○●

جس زخم سے خون نہیں نکلتا

وہ اکثر اپنوں کا ہی دیا ہوتا ہے

Jis zakaham say khoon nae nikalta

Wo aksar apno ka hi dia hota h

○●○●○●○●○●○●○●

کوئی ٹھہرتا نہیں یوں تو وقت کے آگے 

مگر وہ زخم کہ جس کا نشاں نہیں جاتا




Koi thaharta nae yoon to waqat kay agay

Mager wo zakahm kay jis ka nishan nae jata

○●○●○●○●○●○●○●

زخم دھیرے دھیرے بڑھ جاتے تو اچھا تھا 

کاش بچھڑ جانے سے پہلے مر جاتے تو اچھا تھا

Zakaham dheeray dheeray bhar jatay to acha tha

Kasah bichar janay say phlay maar jatay to acha tha

○●○●○●○●○●○●○●

پرانا ابھی سوکھا بھی نہیں تھا

جاتے جاتے اک اور زخم دے گیا

Purana abhi sookha bhi nae tha

Jatay jatay in or zakahm day gaya

○●○●○●○●○●○●○●

جگر کے زخم ہی داستاں میں رنگ بھرتے ہیں

وiرنہ لفظ لکھنے سے کہاں تحریر بنتی ہے

Jiger ky zakahm hi dastan ma raang bharty hn

Warna lafaz likhnay day kahan thareer banti ha

○●○●○●○●○●○●○●

زخم وہی ہے جو چھپا لیا جائے 

جو بتایا جائے وہ تماشہ بن جاتا ہے

Zakahm wohi ha jo choopa liya jaya

Jo bataya jaya wo tamasah ban jata h

●○●○●○●○●○●○●

دل میں کتنے زخم ہیں کسی کو کیا پتہ

یہ اور بات ہے کہ ہم مسکرا کے جیتے ہیں رلانے والوں کے سامنے

Dill ma kitnay zakahm hn kisi ko kiya pata

Ya or bat ha ky hum muskra kay jeetay hn rulanay walon kay samnay

●○●○●○●○●○●○●

تجھ سے تو اچھے زخم ہیں میرے 

اتنی ہی تکلیف دیتے ہیں

جتنی برداشت کر سکوں 

Tuj say to achay han zakahm meray

Itni hi taqleef dety hn

Jitni berdash kar sakoon

●○●○●○●○●○●○●

اتنا کھایا نہیں تھا نمک تیرا

جتنا چھڑکا ہے تم نے زخموں پر

Itna khyaa nae tha nmak tera

Jitna chirka ha tum nay zakhmo par

●○●○●○●○●○●○●

‏سرد سرد موسم میں زرد زرد ہونٹوں پر

چپ کا جو پہرا ہے کوئی تو زخم گہرا ہے

Sard sard mosam ma zard zard honton par

Choop ka jo phara ha koi to zakham ghara ha

●○●○●○●○●○●○●

زخم دینے والے تو بہت ہیں 

لیکن مرہم لگانے والا کوئی نہیں 




Zakahm denay walay to buht haan

Lakin marhum lagany wala koi nae

●○●○●○●○●○●○●

سزا ایسی ملی مجھ کو زخم ایسے لگے دل پر

See also  Bewafa poetry in urdu

چھپاتا تو جگر جاتا سناتا تو بکھر جاتا

Saza asi mili muj ko zakaham asay lagay dill par

Chopata to jiger jata sunata to bikhar jata

●○●○●○●○●○●○●

یا رب تیرا روٹھ  جانا بھی ضروری تھا

انسان کا غرور توڑ نا بھی ضروری تھا 

ہر کوئ خود کو خدا سمجھ  بیٹھا تھا 

یہ شک دور ہونا بھی ضروری تھا 

Ya rab tara rooth jana bhi zarori tha

Insan ka garoor torna bhi zarori tha

Har koi khud ko khudha samaj betha tha

Ya shaq door hona bhi zarori tha

●○●○●○●○●○●○●

کانٹوں سے کیا گلہ وہ تو مجبور ہیں اپنی فطرت سے

درد تو تب ہوا جب پھول بھی زخم دینے لگے

Kanton say kiya gilla wo to majboor han apni fitrat say

Dard to tab hoa jab phool bhi zakahm denay lagay

○●○●○●○●○●○●○●

‏زندگی میں چوٹ لگنا بہت ضروری ہوتا ہے

کیونکہ

زخم جیسا کوئی استاد نہیں

Zindagi ma choat lagna buht zarori ha

Kun kay

Zakahm jesa koi ostad nae

○●○●○●○●○●○●○●

زخم وہی ہے جو چھپا لیا جائے 

جو بتایا جائے وہ تماشہ بن جاتا ہے




Zakahm wohi ha jo choopa liya jaya

Jo bataya jaya wo tamasah ban jata h

○●○●○●○●○●○●○●

دل میں کتنے زخم ہیں کسی کو کیا پتہ

یہ اور بات ہے کہ ہم مسکرا کے جیتے ہیں رلانے والوں کے سامنے

Dill ma kitnay zakahm hn kisi ko kiya pata

Ya or bat ha ky hum muskra kay jeetay hn rulanay walon kay samnay

○●○●○●○●○●○●○●

تجھ سے تو اچھے زخم ہیں میرے 

اتنی ہی تکلیف دیتے ہیں

جتنی برداشت کر سکوں 

Tuj say to achay han zakahm meray

Itni hi taqleef dety hn

Jitni berdash kar sakoon

○●○●○●○●○●○●○●

اتنا کھایا نہیں تھا نمک تیرا

جتنا چھڑکا ہے تم نے زخموں پر

Itna khyaa nae tha nmak tera

Jitna chirka ha tum nay zakhmo par

○●○●○●○●○●○●○●

‏سرد سرد موسم میں زرد زرد ہونٹوں پر

چپ کا جو پہرا ہے کوئی تو زخم گہرا ہے

Sard sard mosam ma zard zard honton par

Choop ka jo phara ha koi to zakham ghara ha

○●○●○●○●○●○●○●

زخم دینے والے تو بہت ہیں 

لیکن مرہم لگانے والا کوئی نہیں 




Zakahm denay walay to buht haan

Lakin marhum lagany wala koi nae

○●○●○●○●○●○●○●

سزا ایسی ملی مجھ کو زخم ایسے لگے دل پر

چھپاتا تو جگر جاتا سناتا تو بکھر جاتا

Saza asi mili muj ko zakaham asay lagay dill par

Chopata to jiger jata sunata to bikhar jata

○●○●○●○●○●○●○●

یا رب تیرا روٹھ  جانا بھی ضروری تھا

انسان کا غرور توڑ نا بھی ضروری تھا 

ہر کوئ خود کو خدا سمجھ  بیٹھا تھا 

یہ شک دور ہونا بھی ضروری تھا 

Ya rab tara rooth jana bhi zarori tha

Insan ka garoor torna bhi zarori tha

Har koi khud ko khudha samaj betha tha

Ya shaq door hona bhi zarori tha

○●○●○●○●○●○●○●

کانٹوں سے کیا گلہ وہ تو مجبور ہیں اپنی فطرت سے

درد تو تب ہوا جب پھول بھی زخم دینے لگے

Kanton say kiya gilah wo to majboor han

Apni fitrat say

Dard to tab hoa jab phool bhi zakahm  denay lagay

○●○●○●○●○●○●○●




Leave a Comment